610

خواب بکھرنے نہ پائیں

آپ ڈاکٹر نوشین کی کہانی سنئے:

ہم پانچ بہن بھائی تھے‘ میرا پانچواں نمبر تھا ‘والد صاحب کا ہول سیل کا کاروبار تھا‘ بڑے بھائی کاروبار میں ابو کا ہاتھ بٹاتے تھے ‘ ہنسی خوشی زندگی گزر رہی تھی‘8اکتوبر 2005کو زمین نے کروٹ لی تو میں اسکول میں تھی‘ پل بھر میں عمارتیں زمین بوس ہو گئیں ‘ چیخ و پکار میں کچھ سجھائی نہیں دے رہا تھا‘ ہمارے اسکول کی عمارت لڑکھڑا رہی تھی ‘ بچیاں ننگے پاؤں اور ننگے سر کھلے آسمان تلے جمع ہو گئیں۔

اﷲ کا شکر تھا ہمارے اسکول میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا لیکن بچیاں زخمی تھیں‘ ہر طرف گردو غبار تھا ‘ چیخ و پکار تھی اور ایک خوفناک گونج نے دماغوں کو ماؤف کیا ہوا تھا‘ ہماری ٹیچرز نے بچوں کا حوصلہ بڑھایا اور سب کو گھروں کی طرف روانہ کیا‘ میں ساتویں جماعت میں پڑھتی تھی‘گھر لوٹی تو نقشہ تبدیل تھا‘ امی اور دوسری دو بہنیں گھر پر تھیں‘ مجھ سے بڑا بھائی بھی اسکول سے گھر لوٹ چکا تھا‘ ابو کا مظفر آباد شہر میں کاروبار تھا اور ہم گاؤں میں تھے‘ گاؤں میں درجنوں لوگ کچے مکانوں کے نیچے دبے ہوئے تھے ‘ ہمارا مکان ٹین کی چھت کا تھا‘ دیواریں گر چکی تھیں لیکن چھت کھڑی تھی۔

ہمیں لوگو ں نے بتایا مظفر آباد مکمل طور پر تباہ ہو گیا ہے ‘ کوئی درست معلومات کا ذریعہ نہیں تھا ‘ ہم ابو اور بھائی کا انتظار کرتے رہے مگر وہ آئے اور نہ انھوں نے آنا تھا‘ ابو اور بھائی دونوں کی لاشیں ایک ہفتے بعد ملیں‘ہماری تو دنیا ہی لٹ گئی‘ کھلا آسمان تھا ہم تھے اور ہماری بے بسی تھی ۔

ہر گزرتے دن کے ساتھ اندازہ ہورہا تھا والد کے بغیر زندگی کیا ہے ؟ ابو کا خواب تھا میں ڈاکٹر بنوں لیکن ابو کے بعد یہ خواب بکھرتا محسوس ہوا ہمیں تو گھر میں راشن کے لالے پڑے ہوئے تھے‘ ایک دن امی نے کہا ہم شہر میں ماموں کے ہاں شفٹ ہوں گے ‘شہر میں ایک ادارہ ہے جس میں یتیم بچوں کے لیے مفت تعلیم کا انتظام ہے۔ ہم شہر میں آئے اسکول دیکھا تو پہلی بار ریڈفاؤنڈیشن کا تعارف ہوا‘ فاؤنڈیشن نے ٹینٹ میں بچوں کے لیے تعلیم کا انتظام کر رکھا تھا‘ میں اسکول میں داخل ہوگئی اور مجھے معلوم ہی نہ ہوا کہ ہمیں یونیفارم کون دے رہا ہے‘ راشن کہا ں سے آ رہا ہے اور یوں وقت گزرتا رہا ‘میں نے ایف ایس سی کرلیا ‘ انٹری ٹیسٹ پاس کیا اور میڈیکل کالج میں داخل ہوگئی۔

ایم بی بی ایس کرنے کے بعد آج میں ڈاکٹر کی حیثیت سے جاب کررہی ہوںجب کہ میرا بھائی بھی تعلیم مکمل کرنے کے بعد بیرون ملک جاب کررہا ہے‘میں آج بھی پیچھے مڑ کر دیکھتی ہوں تو اپنے خواب کی تکمیل میں ریڈ فاؤنڈیشن باپ کے روپ میں نظر آتی ہے‘ صرف ڈاکٹر نوشین کی کہانی نہیں ایسی ہزاروں کام یابی کی کہانیاں ریڈ فاؤنڈیشن کے تعلیمی اداروں میںموجود ہیں۔

اﷲ نے انسان کو پیدا کیا ‘ اسے اس دنیا سے نفع حاصل کرنے کے لیے برابر مواقع دیے لیکن ساتھ کبھی کبھی انسانوں کی آزمائش بھی کرتا ہے ‘یہ آزمائشیں جہا ںان افراد کے لیے مشکلات لاتی ہیں وہاں ان سے بچ جانے والوں کے لیے مواقع بھی فراہم کرتی ہیں۔

آزمائش سے بچ جانے والے انسانی ہمدردی میں ‘ صدقے کے طور پر دوسرے انسانوں کے لیے آسانیاں پیدا کرنے کا کام کرتے ہیں۔ پاکستان میں ایسے کئی افراد اور تنظیمیں اﷲ کی رضا کے لیے جدو جہد کررہی ہیں‘ریڈ فاؤنڈیشن ایسا ہی ایک ادارہ ہے جو گزشتہ 27سالوں سے محروم طبقات کے لیے اپنے حصے کا کام کررہاہے‘ فاؤنڈیشن نے تعلیم کے میدان کا انتخاب کیا اور آنے والی نسلوں کو ایک تعلیم یافتہ اور خوش حال پاکستان دینے کے لیے جدو جہد شروع کی۔

اخلاص نیت اور مسلسل محنت سے تعلیم کے میدان میں فاؤنڈیشن نے کمال کردیا‘ ایک لاکھ بچے فاؤنڈیشن کے تعلیمی اداروں سے فارغ ہو کر اپنے پاؤں پر کھڑے ہوئے اور اس وقت ایک لاکھ پندرہ ہزار بچے زیر تعلیم ہیں‘ میں گزشتہ چند سالوں سے فاؤنڈیشن کے ایک رضا کار کے طور پر اپنا حصہ ڈالنے کی کوشش کررہا ہوں‘ ممکن ہے میری قلم سے نکلا ہوا کوئی لفظ یا جملہ کسی انسان کو خیر کی راہ پر لگا دے اور کل قیامت کے دن میں اللہ کے ہاں سرخرو ہو سکوں۔

پاکستان میں اس وقت اڑھائی کروڑ بچے تعلیم جیسی نعمت سے محروم ہیں‘ ان بچوں کے بھی ڈاکٹر نوشین کی طرح خواب ہیں‘ یہ بھی تعلیم حاصل کر نا چاہتے ہیں لیکن اس نظام نے ان کے لیے راستے تنگ کیے ہوئے ہیں‘میں صبح روزانہ ایسے بچوں کو کوڑے کے ڈھیروں سے رزق تلاش کرتے ‘کسی ورکشاپ میں گندے کپڑوں کے ساتھ ٹائر تبدیل کرتے اور کسی سگنل پر بھیک مانگتے ہوئے دیکھتا ہوں تو کانپ جاتا ہوں کل قیامت کے دن ان بچوں کے ہاتھ ہمارے گریبانوں کی طرف بڑھے تو ہمیں بچانے والا کوئی نہیں ہو گا۔

میں پاکستان کے خوش حال طبقے سے اپیل کرتا ہوں خدارا ذرا تصور کی آنکھ سے دیکھیے‘ ان بچوں کی جگہ اگر ہمارے بچے ہوں تو ہمارے جذبات اور احساسات کی کیا کیفیت ہو گی ؟ یہ بچے ہمارے لیے امتحان بھی ہیں اور اﷲ کی طرف سے ایک آزمائش بھی‘ان بچوں کو تعلیم و تربیت دیے اور ان کی مدد کیے بغیر ہماری نسلوں کا مستقبل کیسے محفوظ ہو گا ؟ ان بچوں کی آنکھو ں میں ادھورے خوابوں کی تکمیل ہم مل کر کرسکتے ہیں ممکن ہے ہم اڑھائی کروڑ بچوں کی مدد نہ کر سکیں لیکن کچھ درد تو کم کر سکتے ہیں ‘ چند خوابوں کو تعبیر تو دے سکتے ہیں ‘ کچھ خوابوں کوتو بکھرنے سے بچا سکتے ہیں ۔

رمضان المبارک شروع ہو چکا ہے ‘ رمضان کامہینہ مسلمانوں کے لیے اﷲ کا خاص تحفہ ہے‘گناہ گار مسلمان بھی اس مہینے میں اﷲ کے قرب اور بخشش کے لیے کوشش کرتا ہے‘ اﷲ تعالیٰ اس مہینے میں لوگوں کے دل نرم کر دیتا ہے ‘ ان کے ہاتھ کھول دیتا ہے‘ رسول اﷲﷺ نے اس مہینے میں کی گئی نیکیوں کا اجر اﷲ کی طرف سے کئی گنا بڑھا کر لوٹانے کی بشارت سنائی ہے ‘ آپ اس مہینے میں ایک روپیہ خرچ کریں گے تو اﷲ اس کا اجر 70گنا بلکہ اس سے بھی بڑھا کر لوٹائے گا ‘ اﷲ نے انسانوں پر خرچ کرنے کو اپنے ساتھ تجارت کہا ہے جس کا نفع اﷲ دنیا اور آخرت میں کئی گنا بڑھا کر دیتا ہے۔

رمضان صدقہ ‘ خیرات اور زکوٰۃ کا مہینہ ہے‘ ہر تجارت کرنے والے کی یہ خواہش ہوتی ہے کہ اس کا زیادہ سے زیادہ منافع ہو‘ اس کا سرمایہ درست جگہ پر لگے‘ آپ تصور کریں آپ کی زکوٰۃاور صدقات سے کوئی یتیم و غریب تعلیم حاصل کرے گا‘ اپنے پاؤں پر کھڑا ہوگا‘ اپنے خاندان کی کفالت کرے گا یوں ایک نسل اپنے پاؤں پر کھڑی ہو گی اور آپ زندہ رہیں یا نہ رہیں یہ عمل آپ کے لیے صدقہ جاریہ کا ذریعہ بنے گا‘ جب تک آپ کے زیر کفیل بچے کی نسل چلتی رہے گی اﷲ آپ کے لیے اپنے خزانے سے منافع دیتا رہے گا‘ آپ کی اولاد محفوظ رہے گی‘ مال میں برکت رہے گی اورمشکلات سے اﷲ کی پناہ میں رہیںگے۔

میں اپنے تجربے کی بنیاد پر کہہ رہا ہو ں صدقہ آپ کے مال میں برکت عطا کرے گا اورآپ کی اولاد فرماںبردار ہو گی‘ صدقہ آپ کو پریشانیوں سے نجات دلائیگا اور آپکی نیک حاجات پوری کریگا ‘ شرط صرف یہ ہے کہ صدقہ آپ صرف اﷲ کی رضا اور نیک نیتی سے کریں‘رمضان میں لوگ اپنے مال کو پاک کرنے کی غرض سے اﷲ کے حکم کے مطابق زکوٰۃ دیتے ہیں‘ زکوٰۃ آپکے مال کو پاک کر دیتی ہے اور اسے بابرکت بنا دیتی ہے۔

آپ یقینا یہ چاہیں گے کہ آپ کی زکوٰۃ اور صدقات درست جگہ پر اور شریعت کے مطابق خرچ ہوں‘ اس زکوٰۃ سے انسانوں کا بھلا ہو اور اﷲ کے ہاں قبول ہو‘ میں پور ے اعتماد سے آپ سے اپیل کرتا ہوں کہ آپ اپنی زکوٰۃ وعطیات ریڈ فاؤنڈیشن کو دیں ‘ فاؤنڈیشن آپ کی زکوٰۃ و عطیات سے یتیم بچوں کی کفالت کریگی اور آپ اﷲ کے ہاں اجر پائیں گے۔

فاؤنڈیشن کے پاس اس وقت 12ہزار یتیم بچے ہیں جن کو مفت تعلیمی سہولیات فراہم کی جاتی ہیں‘ فاؤنڈیشن ان کے لیے کتابیں‘ کاپیاں ‘جوتے‘ یونیفارم اور سٹیشنری فراہم کر تی ہے ‘ فاؤنڈیشن ان بچوں کی کفالت پر سالانہ 36کروڑ روپے کی خطیر رقم خرچ کرتی ہے‘ زیادہ حق دار بچوں کے گھروں میں راشن بھی فراہم کرتی ہے‘ آپ فاؤنڈیشن کے اکاؤنٹ میں اپنی زکوٰۃ جمع کرواکر یافاؤنڈیشن کے ایڈریس پر چیک ارسال کر کے ان کے نمایندے سے رابطہ کریں ‘ فاؤنڈیشن آپ کو آپ کے عطیے کی رسید کے ساتھ یتیم بچوں کی مکمل تفصیل بھی ارسال کرے گی ‘ ہر سال آپ کو آپ کے زیر کفالت بچوں کی پراگریس رپورٹ بھی شیئر کرے گی۔

فاؤنڈیشن کے اکاؤنٹ نمبرز‘ رابطہ نمبرز اور ایڈریس درج ذیل ہیں۔

فیصل بینک:اکاؤنٹ ٹائٹل:
READ FOUNDATION
اکاؤنٹ نمبر3048308900031361 :
انٹرنیشنل بینک اکاؤنٹ نمبر:
PK21FAYS3048308900031361
سوفٹ کوڈ: FAYSPKKA
بینک برانچ : گراؤنڈ فلور ، گرینڈ جور پلازہ ، مین کری روڈ ، اسلام آباد
واٹس ایپ : +92 (0) 334 9272 523
موبائل نمبر:+92 (0) 314 5025 767
یو اے این:+92 (0) 51 111 323 424
ای میل ایڈریس:
[email protected]
ویب سائٹ:
www.readfoundation.org
آفس ایڈریس: READفاؤنڈیشن ، تھرڈ فلور‘الفاروق پلازہ ‘ کری روڈ‘ چک شہزاد ‘ اسلام آباد۔

بشکریہ ایکسپرس